ان چیزوں کو ہم لطف حاصل کرنے کے لیے کھاتے ہیں لیکن آج ہم آپ کو موسمِ سرما میں گُڑ کھانے کے ایسے فوائد بتانے والے ہیں جس کے بعد آپ اس کے استعمال کو ضرور یقینی بنائیں گے۔گُڑ کے بے شمار فوائد ہیں، خاص طور پر اگر اس کا استعمال سردیوں

میں کیا جائے تو یہ جسم کو گرم رکھنے کے ساتھ ساتھ نظامِ قوت مدافعت کو بھی مضبوط کرتا ہے۔موسمِ سرما میں گُڑ کا استعمال کرنے کے فوائد جانیے گُڑ جسم کے اعضاء کے لیے ’کلیننگ ایجنٹ‘ سمجھا جاتا ہے، یورپین جرنل آف فارماسوٹیکل اینڈ میڈیکل

ریسرچ میں شائع ہونے والے آرٹیکل کے مطابق گُڑ پھیپھڑوں، معدے، آنتوں، گلے، اور سانس کی نالی کی صفائی کے لیے بہترین ثابت ہوا ہے۔ روزانہ باہر جانے اور فضائی آلودگی میں سانس لینے کی وجہ سے سانس سے متعلق بے شمار مسائل جنم لیتے ہیں اس پر قابو پانے کے لیے روزانہ معمولی سا گُڑ کھانا مددگار ہوگا اگر ہم گُڑ کی تاثیر کی بات کریں تو اس کی تاثیر گرم ہوتی ہے یہی وجہ ہے کہ

اگر آپ گُڑ کا استعمال سردیوں کے موسم میں کریں گے تو یہ آپ کے جسم کا درجہ حرارت گرم رکھے گا۔گُڑ کھانے سے میٹابولزم کا نظام اچھا ہوتا ہے جس سے جسم گرماہٹ پیدا کرتا ہے جو خون کی روانی کو بھی بہتر کرتی ہے گُڑ کی غذائیت کے اعتبار سے بات کی جائے تو اس میں فاسفورس، کیلشیم، آئرن، اور وٹامن بی کے ساتھ ساتھ میگنیشیم بھی پایا جاتا ہے۔جرنل فار رینائسنس اِن انٹیلیکچؤل

ڈیسیلپن کے مطابق گُڑ نظامِ اعصاب کو مضبوط بنانے میں بھی مددگار ثابت ہوتا ہے گُڑ کا استعمال دردِشقیقہ کے مریضوں کے لیے نہایت ہی اہم سمجھا جاتا ہے۔ گُڑ میں موجود آئرن، میگنیشیم، پوٹاشیم، کیلشیم، میگنیز، زنک اور سیلینیم ایسی نمکیات ہیں جو مائیگرین اٹیک (دردِ شقیقہ کا دورہ) کے لیے مفید ثابت ہوئے ہیں شیرخوار بچوں کی مائیں جن کا دودھ بچوں کے لیے کافی نہ ہوتا ہو وہ صرف

اتنا کریں کہ دودھ کے ساتھ سفید زیرے کا سفوف اور گُڑ صبح و شام استعمال کریں۔ اس سے دودھ کی مقدار بڑھ جائے گی۔ حافظہ تیز کرنے اور یادداشت بڑھانے میں گُڑ کے حلوہ کا استعمال بہترین ثابت ہوا ہے۔ لہذا وہ طلبا جنھیں سبق یاد نہ ہوتا ہو انھیں صبح و شام گُڑکا حلوہ استعمال کرنا چاہیے قبض، بے شمار جسمانی امراض کی جڑ ہے۔ اس سے بواسیر جیسی تکلیف دہ بیماریاں بھی جنم لیتی ہیں۔ قدرت نے گُڑ میں قبض کشا صفت بھی رکھی ہے۔ جن لوگوں کو قبض ہو انہیں گُڑ کا استعمال ضرور کرنا چاہیے۔ نیم کی پکی

نمولی پرانے گُڑ کے ساتھ دن میں تین بار کھانے سے بواسیر جیسے مہلک مرض سے نجات مل جاتی ہے۔پیپل کے پتے دس گرام، دار چینی، تیزپات اور کالی مرچ تیس ، تیس گرام، سونٹھ پینتیس گرام اور ہرڑ کا سفوف سو گرام؛ ان تمام اشیاء کو دو سو گرام گُڑ کے ساتھ اچھی طرح کوٹ کر پیسنے کے بعد پچس ،پچس گرام کے لڈو بنالیں۔ ایک لڈوصبح اور ایک شام کے وقت گرم پانی کے ساتھ کھانے سے بواسیر سے تو چھٹکارہ ملتا ہی ہے، اس کے ساتھ ساتھ انسانی بدن کو بے شمار دوسری بیماریوں جن میں پیٹ کی گیس ، پیٹ کی گڑگڑاہٹ ، سنگرہنی اور ہاتھ پاؤں کی سوجن اور کھانسی سے بھی نجات مل جاتی ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں